The World of Tags


So trust me it has been months or around an year or so that I have done a Tag, these days nobody tags anyone anyhow. Considering that I’m STILL a child according to a comment by someone I have received lately, I planned to get done with the tag tonight 😛 And the tag sort of describes what a Human craves to be in his/her Imagination 😉


If I WERE!

  1. If I were to be a Month; I’d say December, the Month that marks the End of the Gregorian Year (And because its Winter’s )
  2. If I were to be a Day of the Week; I’d say Friday, the Mubarak day of the Week.
  3. If I were to be a Time of the Day; I’d say Early Morning (irrespective of the exact timing), It’s such a serene time to be 🙂
  4. If were to be a Season; I’d say Autumn; waiting to shed off those rotten years of my life.
  5. If I were to be a Planet; I’d say Mars; a Human’s NEXT possible stop 😉
  6. If I were to be a Sea Animal; I’d say a Dolphin, that’s the cutest and the most playful creature of the sea.
  7. If I were to be a Direction; I’d say the Right one (not literally) but morally the Right Direction 😉
  8. If I were to be a piece of Furniture; I’d say a Daybed, it gives you both the pleasure of falling asleep as well as a piece of convenient sitting 😀
  9. If I were to be a Liquid; I’d say blood (no explanation needed).
  10. If I were to be a Tree; I’d be an Oak Tree, because it’s Evergreen.
  11. If I were to be a tool; I’d say a hammer, strike em’ hard Dude!
  12. If I were to be an element; I’d say Water, the Purest.
  13. If I were to be a Gemstone; I’d say a Black Diamond, rarest and Prettiest 😀
  14. If I were to be a Musical Instrument; I’d say a Rabab, because its Simple and it’s Folk.
  15. If I were to be a Color; I’d say Sea Green, its just so Surreal.
  16. If I were to be an Emotion; I’d say Satisfaction.
  17. If I were to be a Fruit; I’d say an Apple, I’d keep the Doctor Away, TRUST ME! 😛
  18. If I were to be a Sound; I’d say the Sound of the Waves smashing the stones.
  19. If I were to be a Car; I’d say I’m BLANK ( yes I can’t think of ANY car right now =/ )
  20. If I were to be a Food; I’d say a Healthy One, everyone talks about it, but no one really bothers to have some 😛
  21. If I were to be a Taste; I’d say I’d LOVE to be the Taste of Victory.
  22. If I were to be a Pair of Shoes; I’d say None. (I dont want to be Shoes).
  23. If I were to be a Bird; I’d say a Snow Owl, Pretty, Mysterious and Wise 😉
And here the Tag comes to a formal Ending. All the To Be’s are truthfully answered (no bragging about them) If I really was to be anything from the above I’d prefer being the one I just answered.
And as a ‘Pass On’ ritual I pass this tag on to:

Ubee
Asma
Umema
Uni
SAWJ
Absar
Shaggy
Haris Gulzar

and etc etc, In short EVERYONE.

ps: I know nobody will think twice about getting done with the tag so Im not wasting my time adding links to the names 😛 Suit Yourself buggers 😛
Advertisements

Yes, Im forcing myself.


Ok so Im just forcing myself for the past couple of weeks to post an update, not that I have a REAL update in life apart from that I finally got admission and Im ready to crack some pencils/pens 😛 and oooh boy is it going to be tough, using keyboards as tool of expression for the past couple of years has totally taken away my power to write. At moments I feel like I have been a doctor in my previous birth (pechala janam) 😛 Only a pharmacist can victoriously decrypt what I could have written, not I, myself.
Ramadan is going great alhumdulilAllah, staying up till Sehri, enjoying all the pakoras that i can have at Aftaar (pretending as if I wont be allowed to have it for the next Aftaar :P) and etcetera.. The routine is just set and often I feel just a bit too stiff with my life these days. Im doing nothing creative apart from polishing my itsy bitsy novel. Yes the reason why I’m not posting any more episodes is that I have made a hell lot of changes in the previous ones, and I need a bit of suggestion. Since I have made an awful amount of amendments in the chapters so should I be posting them again, and remove the previous ones? (that will make me loose all the comments along with the post =/ ) or should I update the previous posts and give a quick update about the changes made in the form of a new post? I really need some motivation to get done with the novel, coz Eid isnt that far and my classes will commence just AFTER Eid, as I have heard Pakistan is generous enough to permit hardly 3-4 days of Eid Holidays (where as Im used to having 10 Holy Eid Fiesta Holidays 😛 ).
Life is getting a harder grip on me these days, often do I feel what I did wasnt right and then there are these days when the flame within just burns the frozen emotions and doesnt let you wipe out the flooding within.
But then all is well that ends well.

Cheerio folks will be forcing myself to update again sometime sooner.

اقبال کا مومن


خدا کی قسم لعنت ہے ہم پر، ہم تو مسلمان ہونے کی ہر حد کو پار کر چکے ہیں، صرف مسلمان کا ٹھپّا اپنے گریبان پر لگائےگھومتے ہیں، کہنے کو تو ہم شرفا ہیں، تعلیم یافتہ ہیں، ملنسار ہیں، اور کبھی کبھار تو اپنے آپکو کو مومن کہنے سے بھی گریز نہیں کرتے، مگر قسم خدا کی ہم لوگ انسان کہلانے کےلائق بہ نہیں ہیں. رونہ آتا ہے مجھے اپنے آپ پر اور اپنے ملک پر اور اس میں بسنے والے لوگوں پر  ہم تو بہت پیر ہیں، اولیاء کےشاگرد ہیں، سینوں میں قرآن لیے پھرتے ہیں، عقیدت مند، سعادت مند مسلمان ہیں، مگر میں کہتی ہوں لعنت ہے اگر ہم اپنےآپ  کو یہ سب دیکھنے کے باوجود مسلمان کہتے ہیں تو. کس نے کہہ دیا کے ہم مسلمان ہیں، کیا مسلمان جھوٹ بولتا ہے؟ کیا وہ کسی کا قتل کرتا ہے؟ کیا غبن کرتا ہے؟ کیا حق تلفی کرنے والا مسلمان ہے؟ جواب دو؟ اور یہ تو سب صغریٰ گناہ ہیں بس اسکی رسی دراز کرتے جاؤ اور الله کےعذاب کا شکار بن جاؤ. شرم کرو میں کہتی ہوں اب بھی کچھ باقی ہے تو تھوڑی شرم ہی کرلو ذرّہ برابر بھی جو تم میں الله کا خوف رہ گیا ہو اے انسان ذرّہ برابرہی صحیح . تم نے تو خدا کو صرف سحری اور افطار کی نشریات تک ہی قید کردیا ہے، روز وہی سوال، وہی جواب، وہی  شقوق وہی شبہات، پیدائش  سےمسلمان ہو اور بچپن سے نہ صحیح تو جوانی  سے روزے تو  رکھ  ہی رہے ہو، بچپن  سےنہ صحیح مگر تیسری جماعت سے تو اسلامیات پڑھ ہی رہے ہو نہ، تب بھی وہی مسئلے ہیں ہمارے بیچ میں، ہم کیا اب تک اپنے دین کے میناروں کو  ہی نہیں سمجھ سکے. عالم و فاضل و قاری و مبتدعی کہنےکو تو  ہم سب کچھ ہیں مگر حقیقت  میں کچھ بھی نہیں
ہم تو ان جانوروں سے بھی بدتر ہیں جو کم از کم انسان کے مر جانے کا تو انتظار کرتا ہے، مگر ہم تو زندہ لوگوں کا گوشت نوچ کر کھا لیتے ہیں. اے مسلمان تیرے کیا کہنے.تجھ سے تبصرے کروا لو، جھوٹ بلوا لو، قسمیں اٹھوا لو، سب کچھ کروا لو مگر صرف سچ، ایمانداری اور حقیقت سے کبھی نظرین نہ ملوانا، مگر یہ بھی ہماری خوش فہمی ہے, اب تو وہ زمانہ بھی گیا جب شرم دلانے سے تجھے تھوڑی شرم آجاتی تھی، اب تو چلّو بھر پانی میں بھی کیا سیلاب کے پانی میں بھی ڈوبکی لگا کر تو زندہ ہی باہر آجائے گا اورسنائے گا کہ الله کا تجھ پر خاص کرم تھا, تو مومن ہے اسی لیہ بچ گیا. افسوس تجھ پر از حد افسوس.
مت رو کے یہ سب کیا ہورہا ہے؟ کیوں ہورہا ہے؟ ہماری مدد کیوں کر کوئی نہیں کر رہا؟ ہم مظلوم، ہم لاچار، ہم پر ظلم ہورہا ہے، ہمارا حکمران بدکردار ہے، بےحس ہے، ارے سب سے بڑا بےحس تو تو خود ہے نہ مراد، اس کو ڈھونڈ کر کروڑوں ووٹ ڈال کر لانے والا تو خود ہے،پھر کہاں کا رونہ اور کہاں کا شکوہ کرنا، جس قدر ہم خود گنہگار ہیں یہ سب ہماری ہی  کراماتوں کا نتیجہ ہے کسی اور کی نہیں. کسی امریکا نے پانی کے نلکے نہیں کھولے اور انڈیا کےدریا اتنا فالتو پانی نہیں لےکربیٹھے  ہوئےجو ہمارے  اوپر نچھاور کرتے پھریں، ہوش کر ذرا سی ہوش کر اے مسلمان، غور کر کے میں پاکستانی کہنے کے بجائےمسلمان ہونے پر زور کیوں دی رہی ہوں وہ اس لیہ کے پاکستانی ہونے کا حق تو ہم کافی پہلے ہی پیچھے چھوڑ چکے ہیں جب ہمارے بچوں کو اس ملک میں گندگی اور مچھر زیادہ نظرآنے   لگے تھے ، رہا اپنے آپ کو مسلمان کہنے کا زعم تو وہ بھی بس ایک من گھڑت قصّہ لگتا ہے.
حیرت ہے مجھے اس شخص پر جو دو مظلوم لوگوں کو مار کر بھی اپنے آپ کو ڈھٹائی سےمسلمان کہہ رہا ہے، آفرین ہے تجھ پر آفرین ہے، اور آفرین ہے ان تمام لوگوں پر جنہوں نے وہاں اس بازار میں کھڑے ہوکر تماشا دیکھا، ان لوگوں پر جنہوں نے اس تماشے کی تصویرین اتاریں اور ان کو اپنے اپنے ڈبّوں میں قید کر کے اپنے شاہی دفتروں کی طرف افسوس کرتے ہوئے چل دیے ، اور سب سے زیادہ آفرین تو ان قانون کے رکھ والوں پر جنہوں نے اپنے کاندھوں پر سے ستارے فرش پر اڑا کر اس سارے تماشے کا کلائمیکس دیکھا. میں تو کہتی ہوں خدا تو آپ لوگ ہیں، اے بندائے ِ قوت ِ جہاں تجھے میرا سلام، تجھ جیسے بڑے دل والا اور کوئی نہیں، تجھے کسی کا خوف نہیں، کسی کا ڈر نہیں تجھے میرا سلام عرض ہو.
کیا ہی منظرہو گر تجھے بھی بیچ چوک میں لا کر ایسے ہی مارا جائے، کیا لگتا ہے تب تیری طاقت تیرے کام آئے گی؟ کیا لگتا ہے اگر اس جہاں میں نہیں تو روز ِ حشر اگر تیرے ساتھ یہ سلوک کیا جائےاور اس وقت تیری جگہ ڈنڈائے انصاف الله کے ہاتھ میں ہو تو تجھے کیا لگتا ہے وہ پولیس کے افسر تجھے بچا لیں گا؟ وہ دن جس دن موت کو ہی سلا دیا جائے گا، کیا تجھے وقت پر موت آجائے گی؟ اور اگر تیری ادھ مؤی لاش کو قربلا کے اس میدان میں سارے جہاں کے سامنے اسی طرح لٹکا دیا جائے اور ایک ایک بندے سے کہا جائے کے آکر ذرہ اسکا حساب تو کرو، تو تجھے کیا لگتا ہے تجھے موت آجائے گی؟ وہاں تو کوئی تیری چیخ سننے والا نہیں ہوگا، بس سب عبرت لینے والے ہونگے، مگر عبرت بھی کیسے, عبرت لینے کا وقت تو نکل چکا ہوگا، عبرت تو اس واقعے سے لینی چاہیے جو کچھ دن پہلے سیالکوٹ میں ہوا، جب دو معصوم بھائیوں کو بیچ چوراہے پر لا کر ان پر ڈاکو ہونے کا الزام تھونپ کر ان پر ڈنڈے برسائے گئے، اور اتنی بار برسائے گئے کہ وہ مظلوم اسی موقعے پر دم توڑ گئے. انکی شرافت کی گواہی دینے والوں کو دھکیل کر تماشبینوں سے دور پھینک دیا گیا، قانون کے پاسداروں نے تماشبینوں کو گھیر کر تماشے کی حدّت کو اور گرما دیا، کی جو کر رہے ہو بے خوف ہو کر کرو ہم تمھارے قانونی خدا تمھارے ساتھ ہیں، اور رونگٹے کھڑے کردینے والا منظر یہ کہ انکی ادھ مؤی نعشوں کو الٹا لٹکا کر انکی حرمت کی پاسداری بھی نہ کی  گئی، آفرین ہے اے انسان، اے مسلمان تجھ پر آفرین ہے. میرے تو حواس ہی نہیں کہ میں اُس گھر کہ منظر کا سوچ سکوں جہاں انکے دو جوان حافظ قرآن بیٹون کی نعشیں پوھنچائی گئی ہونگی، اس باپ کا سر کیسے جھکا ہوگا، جب اُس نے اپنے حافظ قرآن بیٹوں کی میتوں کو کندھا دیا ہوگا اور لوگ یہ کہہ رہے ہونگے دیکھو ڈاکوؤں کا باپ جا رہا ہے . الله  تُو ہی بہتر جاننے والا ہے یہ عبرت کا مقام کس کے لیے ہے یا رب  آلمین یہ عبرت کا مقام کس کے لیے ہے اور کیوں ہم یہ کہتے ہوئے  نظرآتے ہیں کہ بس جی الله کا عذاب ہے ہم پر الله کا عذاب ہے، اے انسان الله اتنا بھی ظالم نہیں کہ مظلوموں پر بنا کسی گناہ کے قہر ڈھاتا رہے، اے مسلمان بس اک بار ذرا اپنا گرہبان جھانک کر تو دیکھ تجھے کیا نظر اتا ہے؟
  الله اکبر اے انسان تیرا کوئی حال نہیں ، تو ہی طاقتور ہے تو ہی انصاف پرست ہے، تو نہ جھوٹا ہے، نہ مکّار ہے، نہ غدّار ہے تو تو خدا ہے، ہر فیصلے سے بے خوف اپنی آنا کا خدا ہے تو. کیا کبھی تنہا راتوں کو یہ سب سوچ کر بھی خوف نہیں آتا؟ یہ سوچ کر خوف نہیں آتا کہ اک دن منوں مٹی تلے ہم نے بھی دفن ہونا ہے، یہ سوچنا کے فرشتے جب اپنے سوالوں کا پٹارا کُھلینگے تو تب کہاں اپنا منہ چھپاتا پھریگا، الله سے بچ کر کہاں جانا ہے اے مسلمان الله سے بچ کر کہاں جانا ہے، اپنے گناہوں کے بوجھ تلے سب نے دھنس جانا ہے، کوئی بچانے والا نہیں ہوگا، کوئی پکار سننے والا نہیں ہوگا، کوئی عرضی لینے والا نہیں ہوگا، ہر کام شفاف طریقے سے ہوگا، ہر حساب بے نقص ہوگا.
اقبال کو اپنے مومن پر بڑا ناز تھا، اے اقبال تو نے تو مومن کو وہ بیان کیا جو وہ کبھی تھا ہی نہیں ، نہ اسکی گفتار میں حقیقت ہے اور نہ اسکے کردار میں کوئی  شان. جن چار عناصر سے تو نےمومن کو بنتا دیکھا وہ سب الله نے اپنے پاس سمبھال لئے ہیں کہ اب مومن صرف مسلمان ہے، نہ اسکے آگے کچھ اور نہ اسکے پیچھے کچھ، وہ پیدا ہوتا ہے، کانون میں ازان دی جاتی ہے اور مبارک ہو اس دنیا میں ایک اور مسلمان کا اضافہ. اقبال کی سوچ کے مومن اب چراغ لے کر ڈھونڈنے سے بھی نہیں ملتے، مومن تو کیا اے اقبال اب تو مسلمان بھی کہیں ڈھونڈنےسے نہیں ملتے

شکریہ پاکستان


نہیں نہ امید اقبال اپنی کشتِ ویراں سے
ذرا نم ہو تو یہ مٹی بڑی زرخیز ہے ساقی


اقبال نے کہا اور کیا خوب کہا, ہزاروں مسلمانوں کی بے پناہ قربانیوں, ان کے لحو کی خوشبو سے رچی ہے یہ مٹی۔ ذرا نم کرو تو یہ دھرتی ان قربانیوں کا صلہ دینے لگتی ہے۔ مگر اب اس دھرتی نے بھی ہار مان لی ہے۔ مسلسل صلہ دیتے دیتے وہ ہمت ہار چکی ہے. سالوں سے بوئے ہوئے بیج کا پھل کب تک کاٹو گے۔ ذرا سوچو پیدائش سے لے کر اب تک اپنی اس سنہری دھرتی کو دیا کیا ہے؟ اپنی محنت سے اپنے لحو سے کبھی اس مٹی کو ذرخیز کیا ہے؟ تمھارے اگلے آنے والے سوال سے بھی باخوبی واقف ہوں۔ کہ جتنا لحو اب برس رہا ہے اس کا مقابلہ بھلا آزادی کی قربانی سے کیوں کر کریں۔ مگر میرے دل میں تو بس ایک ہی بات بسی ہےکہ کہاں وہ حق پرستوں کی اپنی آزادی ِ فکر کی جنگ اور کہاں آج کے حکمرانوں کی اپنی مضبوطی ِ اقتدار کے لئے جنگ۔ ذرا غور کر اے نوجواں, تو بڑا واضح فرق رکھا ہے دونوں میں. تو سارا دن بیٹھ کر اس سوچ میں لمحے گزار دیتا ہے کہ کاش کچھ ایسا ہو جائے پاکستان راتوں رات امریکہ بن جائے۔ کبھی اس بات پر بھی غور کر لیا کر کہ امریکیوں کو امریکہ بنانے کے لیے کتنی محنت اور بھاری سرمایکاری کرنی پڑھتی ہے۔ مگر تم کیا جانوتم تو پیدائش سے ہی سونے کے چمچے سے سونے کا نوالہ لینے والوں میں سے ہو. جس پنچھی نے کبھی قید دیکھی ہی نہ ہو اس کو کیا علم آزادی کس جام کا نام ہے۔ پوچھنا ہی ہے تو کسی کشمیری سے پوچھو آزادی کس گل کا نام ہے۔ کسی فلسطینی سے پوچھو آزادی سورج کی کس کرن کو کہتے ہیں۔ تم تو بس اس ٣٠ انچ کے ڈبےکو صبح شام تکتے رهتے ہو, جو اس پر سے سن لیا وہی حقیقت ہے، جو کچھ دیکھا وہ سب سے بڑا سچ ہے. نہ خود کسی چیز کو جاننے کی کوشش کی اور نہ سمجھنے کی، اور نہ ہی آگے کوئی ارادہ مطلوب لگتا ہے

موجودہ دور ِ حکومت کے نقص گنوانے ہوں تو صف میں سب سے آگے آپکو پایا جاتا ہے. بھلے مانس اگر جعلی ڈگری کے مرتکب ہیں تو کیا ہوا، رشوت لیتے ہیں تو کونسی بڑی بات ہے، اقربا پروری کے حامی ہیں تو کونسا بڑا گناہ کر دیا. ووٹ ڈال کر جس گناہ کا ارتکاب آپنے کیا ہے اور جو بیج آپنے بویا ہے، اس کا پھل تو اب کاٹنا ہی پڑے گا

میری تو اپنے آپ سے, سب سے, بس یہی التجاہ ہے کہ محنت نہیں کرسکتے نہ کرو، مدد نہیں کرسکتے نہ کرو، اس مٹی کو اپنے پسینے سے نم نہیں کرسکتے, نہ کرو مگر اے اس وطن کے باسیوں صرف ایک بار دل سے اس ملک کو اپنا تو مانو. چھوڑو باہر کے ملکوں کو وہاں کیا رکھا ہے، وہاں اُس دیس میں ایسی خوشبو کہاں. ایسی زرخیزی کہاں، ایسی الفت کہاں، ایسی چاہت کہاں- زندگی بھر لگا دو گے باہر, مگر پلٹ کر آنا تو اپنے لئے منوں مٹی ڈھونڈنے یہیں ہینا، تب کس منہ سے اسکو اپنا کہوگے، کس حق سے اسے اسکا فرض یاد دلاؤ گے

کچھ نہ کر سکو تو اک بار اسکو یہی که دو, اے میری دھرتی میری وارث تجھے میرا سلام
شکریہ پاکستان

Ermmmmm. Im Sorry =/


I dont have words to describe WHY I havent been updating my blog, especially the novel I had been hooked up to doesnt seem to be moving any further. I had been working on the story for a while, and I ended up adding stuff and polishing the entire story, to make it more NOVEL like. I came across plenty of bloopers I had to overcome, and new scenes in the episodes already written. So Ill most probably be editing the Previous entries as well, once Im done with the Novel.
Another reason WHY I haven’t been editing is the Extra work Im hooked up with, a National Campaign on Social Networks like Twitter, Facebook, Flickr, infact everywhere you get a chance to show yourself in the form of Images. Its called “Go Green Pakistan”. A reason to Unite before 14th of August, turning your timelines, friend lists, every possible thing Green 🙂
If you feel like turning green then let us know at greenkaro@gmail.com or fill up the form here.

Happy Blessed Month of Ramadan Everyone 🙂
Read in the Name of Allah